donateplease
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Azeez Belgaumi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* اپنے خاموش سمندر میں بھنور پیدا کž *


غزل

عزیز بلگامی…09845291581

اپنے خاموش سمندر میں بھنور پیدا کر
سیپیاں خالی نہ رہ جائیں ،گہر پیدا کر
اِلتجائیں تری جاکر کہاں رُک جاتی ہیں
اب کے گردوں میں کوئی راہ گزر پیدا کر
خواب لگتی ہیں دُعائوں میں اثر کی باتیں
ہو سکے تجھ سے تو شکوئوں میں اثر پیدا کر
ہم پہ احسان نہ کرنا، ترا احساں ہوگا
اپنی آنکھوں میں نہ محسن کی نظر پیدا کر
یہ چھلکتے تو ہیں، رُخسار پہ ڈھلتے ہی نہیں
آنسوئوں میں بھی ذرا عزمِ سفر پیدا کر
کٹ تو سکتا ہو جھکانے سے نہ جھکتا ہو کبھی
سر کوئی ایسا بھی اک شوریدہ سر پیدا کر
ذہن تھا سوچ میں جذبات ہوں پیدا کیسے
دفعتاً آئی صدا، دِل میں اُتر پیدا کر
اِتنے تاریک نہ تھے دن کے اُجالے اے عزیزؔ
میری خواہش ہے کہ توُ دن میں سحر پیدا کر

٭٭٭

 

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 364