donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* کٹنے میں خموشی سے کیا مثل_ شجر ہونا *
غزل
از ڈاکٹر جاوید جمیل
 
کٹنے میں خموشی سے کیا مثل_ شجر ہونا
طاری ہو تری دہشت، یوں سینہ سپر  ہونا
 
ہے عزم_ سفر لازم، منزل کی خبر لازم
اور ساتھ میں لازم ہے کچھ رخت_ سفر ہونا
 
سورج  کا  تعاقب
 کر ، جا ئے گا  کہاں آخر
 اک  امریقینی ہے ، ہرشب کی سحر ہونا
  
ہر شاخ  پہ  ہرپھل  پہ،  ہر خارپہ ہرگل پہ
 ہو سارے  گلستان  پہ ، اک ایسی نظر ہونا  
 
یہ  حق  ہے مسافر  کا،  آسان  ہو رہ اس کی 
رحمت ہوجو قدموں پہ ، وہ راہگزرہونا 
 
رشتوں میں نہ آ پا ئے کانٹا  جہاں  تلخی کا  
ہر گھر کی کہاں قسمت اک
 گھرکا سا گھر  ہونا  
 
سمجھا  دو  فقیروں کو پھیلاؤ نہ ہاتھ  اپنے 
روزی  کی  ضمانت ہے ہاتھوں میں ہنرہونا
 
سیماب مزاجی نے پاگل سا کیا دل کو
اک پل میں ادھر ہونا، اک پل میں ادھر ہونا
 
اس زلف کو سرکرنا جاوید ہدف میرا 
ممکن نہیں لگتا ہے جس زلف کا سرہونا 
*****
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 502