donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* پڑی نظر جو مری تو شباب جھوم اٹھا *
غزل

از ڈاکٹر جاوید جمیل
 
پڑی نظر جو مری تو شباب جھوم اٹھا

پڑا ہوا تھا جو اس پر نقاب جھوم اٹھا

 

قبول اس نے کیا جیسے ہی وہ سرخ گلاب

تو میں نے دیکھا خوشی سے گلاب جھوم اٹھا

 

لپک کے پھرتی سے شیطان کو مٹا ڈالا

فلک نے دیکھا کہ ساقب شہاب جھوم اٹھا

 

کھڑی تھی دیر سے کشتی تو جھیل تھی خاموش

چلائی جیسے ہی پتوار آب جھوم اٹھا

 

جو خواب خواب رہا وہ اداس تھا جاوید

بدل گیا جو حقیقت میں خواب جھوم اٹھا
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 503