donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* مجھ پر بھی آ رہا ہے الزام تھوڑا تھو *

 

غزل

از ڈاکٹر جاوید جمیل

 

مجھ پر بھی آ رہا ہے الزام تھوڑا تھوڑا

اور تو بھی ہو رہا ہے بدنام تھوڑا تھوڑا

 

"یاد آتا ہوں کبھی میں؟"، جب پوچھا میں نے اس سے 

نظریں جھکا کے بولا "ہر شام تھوڑا تھوڑا "

 

آنکھوں سے اس کے ہوکے دل میں اتر رہا ہوں  

سانچے میں ڈھل رہا ہے گلفام تھوڑا تھوڑا

 

جاتا ہوں جس جگہ بھی، آ جاتے ہیں وہیں وہ 

ہوتا ہے شاید  ان کو الہام تھوڑا تھوڑا

 

ہونے لگی ہے قربت بیباک تھوڑی تھوڑی 

مچنے لگا دلوں میں کہرام تھوڑا تھوڑا

 

عادت نہیں ہے مجھ کو، پہلے تجھے چھوا کب

اپنا اثر دکھانا اے جام تھوڑا تھوڑا

 

جز جز حیات میری خود مجھ سے چھن رہی ہے 

ہر روز ہو رہا ہوں نیلام تھوڑا تھوڑا

 

کرنے مری عیادت آخر وہ آ گئے ہیں 

ہونے لگا ہے فوراً آرام تھوڑا تھوڑا

 

آئے ہیں میری جانب دو چار سنگ ریزے

ملنے لگا جنوں کا انعام تھوڑا تھوڑا

 

انکا نظریہ پل پل تبدیل ہو رہا ہے

شا ید پہنچ رہا ہے پیغام تھوڑا تھوڑا

 

کہنے کو کام کتنے جاوید کر رہا ہے 

کرتا ہے جانے کیوں وہ ہر کام تھوڑا تھوڑا

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 
 
 
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 454