donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* ایسی ہے چمک گویا اترا ماہ آنکھوں م *

 

غزل

از ڈاکٹر جاوید جمیل

 

ایسی ہے چمک گویا اترا ماہ آنکھوں میں

دفعتاً ابھر آئی دل کی چاہ آنکھوں میں 

بے حجاب ہونے کو ہے شباب بھی بیتاب

ہے ادھر بھی بیتابی بے پناہ آنکھوں میں 

ہو گیا سکوں غائب، بڑھ گئی ہے بیچینی

کوئی آ کے بس بیٹھا خام خواہ آنکھوں میں   

اس کا حسن ہے گویا پر کشش غزل کوئی

دل میں داد گونجی ہے، واہ واہ آنکھوں میں

میں یقیں کروں کب تک اسکے قسموں وعدوں پر

لفظوں میں اعادہ ہے، اشتباہ آنکھوں میں

لاکھ بے گناہی کا کوئی بھی کرے دعوا 

ایک دن چمکتا ہے ہر گناہ آنکھوں میں 

تربیت میں بچوں کی احتیاط لازم ہے 

سرزنش رہے لب پر، انتباہ آنکھوں میں 

کچھ بھی خواہ ہو جائے، رہنی چاہئے جاوید 

دین_ استقامت کی شاہراہ آنکھوں میں   

*******************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 473