donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* ہر ایک شب کو ترے نام ہونا پڑتا ہے *
غزل
 
 از ڈاکٹر جاوید جمیل
 
ہر ایک شب کو ترے نام ہونا پڑتا ہے 
اداس دل کو سر_ شام ہونا پڑتا ہے
 
خبیث تہمتیں دامن کو چیر جاتی ہیں  
تمہارے واسطے بدنام ہونا پڑتا ہے
 
ہمیں سے لگتا نہیں ہے کسی پہ بھی الزام
 ہمیں کو مورد_ الزام  ہونا پڑتا ہے
 
قلم ہیں کتنے جو تلوار بن کے جیتے ہیں 
یہاں قلم کو بھی نیلام ہونا پڑتا ہے  
 
یہی ہے ارض و سماوات کا اصول، ہمیں 
کبھی سبب کبھی انجام ہونا پڑتا ہے
 
ہر اک گناہ گواہی سے بچ نہیں سکتا
کبھی تو رجم سر_ عام ہونا پڑتا ہے
 
ہدف پہ لگنے سے پہلے یہ ہوتا ہے جاوید 
کئی نشانوں کو ناکام ہونا پڑتا ہے 
 
۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸
 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 453