donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* الطاف کی بارش ہے گمراہ شریروں پر *
غزل
از ڈاکٹر جاوید جمیل
 
الطاف کی بارش ہے گمراہ شریروں پر
طوفاں ہیں مصائب کے نیکی کے سفیروں پر     
 
Altaaf ki baarish hai gumraah shareeroN par
Toofan haiN masaib ke neki ke safeeroN par
 
جب زیست میں آئے گا، دیکھےگا تعجب سے
بیٹھا ہوں تری خاطر الفت کے ذخیروں پر
 
jab zeest meiN aayega dekhega taajjub se
baiTHa huN teri KHatir ulfat ke zaKHeeroN par
 
رہتا ہوں تخیل میں سائے میں ستاروں کے
لکھی ہے مری قسمت شنبنم کی لکیروں پر
 
rahta hooN taKHayyul meiN saaye meiN sitaroN ke
likhkhi hai meri qismat shabnam ki lakeeroN par
 
بے نام غریبوں کی پروا ہے یہاں کس کو
انعام برستے ہیں بد نام امیروں پر
 
benaam ghareeboN ki parwa hai yahaN kis ko
in’Aam baraste haiN badnaam ameeroN par
 
منزل ہے فقط انکی خود اپنی ہوس پرسی
پھر کیسے بھروسہ ہو ان جیسے مشیروں پر
 
manzil hai faqat unki khud apni hawas pursi
phir kaise bharosa ho un jaise musheeroN par
 
شیطاں کے وساوس سے کس طرح بچا جائے
اک بار_ مسلسل ہے لاچار ضمیروں پر   
 
shaitaaN ke wasaawis se kis tarh bacha jaaye
ek baar–e musalsal hai lachaar zameeroN par
 
اے وقت! تمناہے ہم کو بھی اسی پل کی
کب ابر_ کرم برسے ہم ایسے حقیروں پر
 
ae waqt tamanna hai hum ko bhi usi pal ki
kab abr-e karam barse hum aise haqeeroN par
 
اک جہد_ مسلسل ہو میدان_ حقیقت میں
کیوں پھرتے ہیں آوارہ خوابوں کے جزیروں پر  
 
 
Ek johd-e musalsal ho maidaan-e haqiqat meiN
kyuN phirte hain aawarah KHwaaboN ke jazeeron par
 
ہشیار تھے دشمن سے، سوچا نہ تھا یہ لیکن
"جاوید" لکھا ہوگا احباب کے تیروں پر  
 
hushyaar tha dushman se socha na tha yeh lekin
“Javed” likha hoga ahbaab ke teeroN par
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 519