donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* جب مقدر میں یہی ہے تو مقدر ہی سہی *
غزل
از ڈاکٹر جاوید جمیل
 
 
جب مقدر میں یہی ہے تو مقدر ہی سہی  
زیست تنہائی کا خاموش سمندر ہی سہی 

ہر کوئی لذت_ آغوش سے بہرہ ور ہے 
میری راتوں کے لئے ہجر کا بستر ہی سہی 

انکی خوشبو سے معطر ہے کسی اور کا گھر 
میرا گھر یادوں کی خوشبو سے معطر ہی سہی 

 مل کے ہو سکتے ہیں امکاں نئے پیدا ورنہ  
قلب جذبات کے افلاس کا خوگر ہی سہی  

شاہ کے آگے مرا فرض تھا حق بات کہوں 
میری بیباک خطابت سے وہ ششدر ہی سہی 

عبد اسکا نہ بنوں جس نے بنائی دنیا ؟ 
واسطے میرے شب و روز مسخر ہی سہی 

آئیں وہ لوٹ کے جاوید کسی بھی صورت 
عجز میں تر نہ سہی کبر کے پیکر ہی سہی
 

***************

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 496