donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* مرے وجود کا ہی جزوگمشدہ نکلا *

غزل


جاوید جمیل

مرے وجود کا ہی جزوگمشدہ نکلا 
وہ اجنبی تھا مگر جب ملا مرا نکلا 

میں کیا سمجھتا رہا خود کو اور کیا نکلا 
خیال تھا، ہوں خردمند، سرپھرا نکلا 

لگائے جس پہ گئے تھے ہزارہا الزام 
وہ برسوں بعد عدالت میں بے خطا نکلا 

فساد کیسے بھڑک اٹھے، جب ہوئی تحقیق 
تو سازشوں کا خطرناک سلسلہ نکلا

جسے پکڑ کے بلندی کو چھونا چاہا تھا 
وہ دیکھنے میں تو رسا تھا، اژدہا نکلا

جسے حقیر سمجھتا رہا میں مدت تک 
نہ جانے کتنے بڑے لوگوں سے بڑا نکلا
ا 
کہ معجزے کو بھی درکار ہے عمل جاوید 
عصا اٹھا تو سمندر میں راستہ نکلا

 ***********
 
 

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 446