donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* وہ بات ہی نہیں کرتے تو بات رہتی کیا *

غزل

ڈاکٹر جاوید جمیل

وہ بات ہی نہیں کرتے تو بات رہتی کیا
وہ روٹھے رہتے تو و جہ_ حیات رہتی کیا

ترا خیال ترے ساتھ اگر چلا جاتا
تو آج رات مری رات رات رہتی کیا

سمجھ نہ پاتا اگر مشورے نگاہوں کے
تو مجھ پہ یہ نگہ _التفات رہتی کیا

حیا لباس نہ محبوب کا اگر رہتی
ہے تشنگی جو  تجسس  کی، ساتھ رہتی کیا

اگر زمانے سے حق کو شکست ہو جاتی
کوئی زمیں پہ سبیل_نجات رہتی کیا
 
نہ ہوتی روح مری نفس پر اگر غالب
مری گرفت میں یہ میری ذات رہتی کیا
 
ربوبیت کا تعلق ہے حمد سے جاوید
نہ حمد کرتی اگر، کائنات رہتی کیا

۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸

 

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 465