rishta online logo
newsletter
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* کیوں رشتہء مجاز کا اک سلسلہ سا ہے *

غزل


از ڈاکٹر جاوید جمیل
 
 
کیوں رشتہء مجاز کا اک سلسلہ سا ہے
وہ آشنا نہیں ہے تو کیوں آشنا سا ہے
 
جو کچھ دکھائی دیتا ہے وہ کاش سچ نہ ہو
وہ بے وفا نہیں ہے تو کیوں بے وفا سا ہے
 
خاموشیاں چہار طرف، منجمد ہوا
یہ موسم_ فسردہ مرا ہمنوا سا ہے
 
میری طرح اسے بھی کسی کا ہے انتظار
ہے شام پر خمار سا، مجھ پر نشہ سا ہے
 
میں کھینچتا ہوں پاس تو جاتا ہے دور وہ
کہتا زباں سے کچھ نہیں لیکن خفا سا ہے
 
نعم البدل کہاں ہے بھلا تیرا، تیری یاد
البتہ زیست کے لئے اک آسرا سا ہے
 
کیسی ہوس ہے جس نے مٹا دی شگفتگی
لہجہ ہر ایک شخص کا کیوں کھردرا سا ہے
 
توڑا ہے اس نے دل ترا جاوید اور اب
کہتا ہے اس کا جرم یقینآ ذرا سا ہے  


ٌٌٌٌٌٌٌٌٌٌٌٌٌٌٌٌٌٌ۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸

 

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 377