donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* مان بھی جائیے جو ہوا سو ہوا *

غزل


 ڈاکٹر جاوید جمیل

 
مان بھی جائیے جو ہوا سو ہوا
اب تو لوٹ آئیے جو ہوا سو ہوا
 
میری تنہائیاں برف سی ہو گئیں
برف پگھلائیے جو ہوا سو ہوا
 
مانتے ہیں کہ سمجھوتہ آساں نہیں
دل کو سمجھائیے جو ہوا سو ہوا
 
اک نیا نغمہ رقصاں فضاؤں میں ہے
ناچئے گائیے جو ہوا سو ہوا
   
صرف میں نے خطا کی ہو ایسا نہیں
لب نہ کھلوائیے جو ہوا سو ہوا
 
پختہ وعدۂ ہے وعدۂ نباہیں گے ہم
اب نہ اترائیے جو ہوا سو ہوا
 
یہ حیا یہ جھجھک چھوڑ بھی دیجئے
اب نہ شرمائیے جو ہوا سو ہوا
 
پھینکئے گا نہ پتھر برائے کرم
پھول برسائیے جو ہوا سو ہوا
 
انتظار اور ہوتا نہیں آئیے
اب نہ تڑپائیے جو ہوا سو ہوا
 
ساری کڑواہٹیں چھوڑیے آئیے
جام پلوائیے جو ہوا سو ہوا
 
سب کا تھا جو وہ جاوید ہردلعزیز
اس سے ملوائیے جو ہوا سو ہوا


۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸۸

 

 

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 396