donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* شب وروز میں ہے ثبات کب *
غزل
ڈاکٹر جاوید جمیل
 
شب وروز میں ہے ثبات کب
ہے مری حیات حیات کب
 
نہ پتہ چلا تری یاد میں
ہوئی صبح کب گئی رات کب
 
بھلا آتا کیا ترے خواب میں
ترا آئنہ مری ذات کب
 
 مرے دوست دیکھیں گے رشک سے
مرے ہاتھ میں ترا ہاتھ کب
 
کوئی بات اور کہاں ہوئی
ہوئی منقطع تری بات کب
 
 ادب و لحاظ، حیا، تمیز
نی نسل میں یہ صفات کب
 نہ ہی مشغلے نہ ہی ولولے
غم_ زندگی سے نجات کب
 
جو نکالتیں نئے زاویے
مری فکر میں وہ جہات کب
 
میں اگا رہا ہوں محبتیں
ملیں دیکھیے ثمرات کب 
*******
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 507