donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* نہیں خود کوئی شے نکلے اندھیرے *
غزل
از ڈاکٹر جاوید جمیل


نہیں خود کوئی شے نکلے اندھیرے
اجالے چھپ گئے، آئے اندھیرے

ہوئے رو رو کے پاگل سے اندھیرے
کسی کی یاد کے مارے اندھیرے

شفق نے آنکھ کھولی ہے ذرا سی
ادھر دوڑے ادھر بھاگے اندھیرے

اجالے چبھتے ہیں آنکھوں میں میری
مجھے لگنے لگے اچھے اندھیرے

مشقت کیجئے گا خوب دن بھر
لگیں گے رات بھر میٹھے اندھیرے

چلی سرگوشیاں ان سے سحر تک
نہ گونگے ہیں نہ ہیں بہرے اندھیرے

نہ چہرہ ہے نہ انکا عکس کوئی
بھلا دیکھیں گے کیا شیشے اندھیرے

کھلا آنکھوں کو رکھ پائیں گے کب تک
سلا کرکے ہی دم لینگے اندھیرے

ہیں جانے تجھ سے کیوں جاوید نالاں
کئے ہی جاتے ہیں شکوے اندھیرے
*******
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 463