donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* ہر شخص چاہتا ہے اسے آشیاں ملے *
غزل

از ڈاکٹر جاوید جمیل

ہر شخص چاہتا ہے اسے آشیاں ملے  
اورآشیاں میں خلد_ بریں سا سماں ملے  

ہر تحفه خاص ہوتا ہے لیکن وہ خاص شخص 

اک پھول دے گیا تو لگا دو جہاں ملے

جی چاہتا ہے دیکھ لوں جی بھر کے پیار سے 
بچھڑے گا آج وہ تو نہ جانے کہاں ملے 

چلتے رہے تو آ گئے منزل کےآس پاس
رستہ میں لاکھوں ٹھہرے ہوئے کارواں ملے 

جو مردہ جسم و جان میں اک روح پھونک دے
تحریک کو نیا کوئی روح _ رواں ملے 

جس میں ہو صرف نور, اندھیرا چھپا نہ ہو
ایسی کہیں کوئی نئی اک کہکشاں ملے 

جاوید امتحان توآئیں گے بار بار 
مشکل خدا کرے نہ کوئی امتحاں ملے 
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 477