donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* زخم پر زخم محبان_ ستم دیتے گئے *
غزل
ڈاکٹر جاوید جمیل
 
زخم پر زخم محبان_ ستم دیتے گئے
تہ بہ تہ جم گئے غم پھر بھی وہ غم دیتے گئے
 
ہم انھیں کشف کی صورت نظر آئے ہر وقت
وہ مگر ہم کو فقط خواب_ عدم دیتے گئے  
 
گل تھے، مقصود ہمارا تھا ثمر ہو جانا
توڑ کر شاخ سے کیوں رنج و الم دیتے گئے
 
اہل_ باطل کی یہ سازش تھی کہ مفلوج ہو فکر
نام لے لے کے حقیقت کا بھرم دیتے گئے
 
اہل_ قوت کے اشاروں پہ قلم چلتا گیا
وہ عوض میں اسے اک خاص رقم دیتے گئے
 
لگتا ہے رک سی گئی ولیوں کی زیبائش_ نسل
اور شیطانوں کو شیطان جنم دیتے گئے
 
ٹھہرے محبوب، انھیں ٹھگنے کا حق تھا جاوید
حکم دیتے رہے جس چیز کا، ہم دیتے گئے
*****************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 523