donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Dr Javed Jamil
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* چشم_ زدن میں دل کی تہوں میں اتر گیا *
غزل
ا ز ڈاکٹر جاوید جمیل
 
چشم_ زدن میں دل کی تہوں میں اتر گیا
مانند_ برق پھر رگ و پے میں بکھر گیا
 
آیا براہ_ راست ہوس کی کمان سے
سوداگری کے تیر سے کردار مر گیا  
 
یاد اتنا ہے کہ آیا تھا اک لمحہء خوشی
جانے کدھر سے آیا تھا، جانے کدھر گئے
 
وہ تھک گیا سوالوں سے موسیٰ کے صرف تین
"بس اور اب نہیں" یہ کہا اور خضر گیا
 
بکھرے ہوئے ہوئی ہیں ابھی چند ساعتیں
جاوید! لگتا ہے کہ زمانہ گزر گیا
************************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 515