donateplease
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Mansoor Khushtar
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* رکھّی تھی شرطِ وفا عاشق سے اک معشو *


ڈاکٹر منصور خوشتر


ماں کی ممتا

رکھّی تھی شرطِ وفا عاشق سے اک معشوق نے
دل وہ اپنی ماں کا لائے کاٹ کر اِس کے لئے

اُس نے اپنی ماں کا دل پہلو سے کر ڈالا جدا
اور ہتھیلی پر اُسے رکھ کر چلا وہ دوڑتا

راہ میں ٹھوکر لگی اور منہ کے بل گر ہی پڑا
ماں کے دل سے تب یکایک آئی اک ایسی صدا

’’پیارے بیٹے! چوٹ تو زیادہ نہیں تم کو لگی
شرط پوری کر اِسی میں ہے اگر تیری خوشی‘‘

ماں کی ہستی کا نہیں دنیا میں ہے ثانی کوئی
اُس کے دل میں خاص اک خوبی خدا نے ہے رکھی

ماں کی اِس ممتا کا حق کیا ہو ادا اولاد سے
کر دعائے خیر ہی خوشترؔ سدا اُن کے لئے


*************************

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 278