rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Mushtaque Darbhangwi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* رُخ سے اٹھا نقاب غزل کہہ رہا ہوں می *
رُخ سے اٹھا نقاب غزل کہہ رہا ہوں میں
اے پیکرِ شباب غزل کہہ رہا ہوں میں

ٹکڑے ہوئے ہیں کتنے دلِ ناصبور کے
کیسے کروں حساب غزل کہہ رہا ہوں میں

چھائی ہے اُس کی صورتِ زیبا نگاہ میں
آنکھوں میں بھر کے خواب غزل کہہ رہا ہوں میں

اُس حسنِ بے مثال کی بن جائے جو مثال
بے مثل و لاجواب غزل کہہ رہا ہوں میں

چھایا ہے مجھ پہ جامِ سخن کا خمار ابھی
پی کر شرابِ ناب غزل کہہ رہا ہوں میں

پھر آج میرے آئینۂ دل کے سامنے
ہے حسن بے حجاب غزل کہہ رہا ہوں میں

مہکی ہوئی ہے بوئے تغزل سے بزمِ شوق
مثلِ رخِ گلاب غزل کہہ رہا ہوں میں

روشن ہے شاعری کی فضا میری فکر سے
مانندِ ماہتاب غزل کہہ رہا ہوں میں

مشتاقؔ آج میرے شبستانِ شوق میں
ہے کوئی محوِ خواب غزل کہہ رہا ہوں میں
*******************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 273