rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Mushtaque Darbhangwi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* انسانیت کا خون وہی چوستا رہا *
انسانیت کا خون وہی چوستا رہا
جو قوم کی نگاہ میں رہبر بنا رہا

تم دن کی روشنی میں بھی سوئے ہوئے رہے
میں شب کی تیرگی میں بھی جاگا ہوا رہا

حالات نے کیا مجھے بے بس کچھ اس طرح
بارِ غمِ حیات سے پیہم دبا رہا

بن کے متاعِ کوچہ و بازارِ زندگی
میں جسمِ ناتواں کی تھکن بیچتا رہا

قائم تعلقات تھے اُس سے کچھ اِس طرح
میرے قریب رہ کے وہ مجھ سے خفا رہا

میں اک خدا کے آگے جھکائے ہوئے تھا سر
وہ سیکڑوں خدائوں کے آگے جھکا رہا

مشتاقؔ میں بھی اپنی تمنا کے شہر میں
پرچم پیام امن کا لے کر کھڑا رہا
********************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 207