donateplease
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Mushtaque Darbhangwi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* اتنی حسین رات ہے جاتے ہو تم کہاں *
اتنی حسین رات ہے جاتے ہو تم کہاں
جلوہ فشاں ہے چاند مہکتا ہے گلستاں

چمکیں تمہاری زیست میں جگنو امید کے
کھنکیں تمہاری مرمریں بانہوں کی چوڑیاں

میری سیاہ رات کو تابندہ کرگئی
تیری حسین مانگ کی پُرنور کہکشاں

انسانیت کے خون میں ڈوبی ہوئی حیات
کہتی ہے عہدِ جبرِ مسلسل کی داستاں

دورِ خزاں سے مجھ کو شکایت نہیں کوئی
فصلِ بہار نے مرا لوٹا ہے آشیاں

پھولوں سے بھی حسین ہیں ، کلیوں سے نرم خو
اُس پیکر جمیل کے ہونٹوں کی پتیاں

کتنے ہی پارسائوں کو پینا سکھا گئی
اے نو بہارِ ناز! تری چشمِ مے فشاں

ہوتا ہوں جب میں اُس سے کبھی محوِ گفتگو
مشتاقؔ کچھ نہ پوچھئے اُس وقت کا سماں
*****************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 272