donateplease
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Mushtaque Darbhangwi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* میری نگاہ سے وہ اگرچہ چھپا رہا *
میری نگاہ سے وہ اگرچہ چھپا رہا
میں اُس کو چشم دل سے مگر دیکھتا رہا

اُس حسنِ بے پناہ کا شیشہ نما بدن
سنگِ نظر کے خوف سے سہما ہوا رہا

جب تک وہ بے نقاب رہا میرے سامنے
ماہِ شبِ تمام بھی پھیکا پڑا رہا

ہجرت کا کرب دل میں لئے اپنے شہر کو
حسرت بھری نگاہ سے میں دیکھتا رہا

ہر لمحہ موت میرے تعاقب میں تھی مگر
میں زندگی کے ساز پہ نغمہ سرا رہا

تم بھی مرے خیال میں اُلجھے ہوئے رہے
میں بھی تمہاری یاد میں کھویا ہوا رہا

دولت ملی تو آج خدا بن گیا ہے وہ
کل جو خدا کے سامنے بندہ بنا رہا

مشتاقؔ کیسے دیکھتا میں اُس کو اشک بار
ہونٹوں پہ میرے بن کے جو حرفِ دعا رہا
******************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 290