donateplease
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Mushtaque Darbhangwi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* اک جشن کا سماں تھا امیروں کے شہر می *
اک جشن کا سماں تھا امیروں کے شہر میں
لاشوں کا تھا ہجوم غریبوں کے شہر میں

غیروں نے ہر قدم پہ سہارا دیا مجھے
میں بے اماں رہا مگر اپنوں کے شہر میں

اندھوں میں بھی شمار ہمارا نہ ہو کہیں
ہم آنکھ والے آگئے اندھوں کے شہر میں

مل جائوں گا میں تجھ کو کسی بے نوا کے گھر
تو ڈھونڈ مجھ کو درد کے ماروں کے شہر میں

اے مفلسی ترے لئے کچھ بھی نہیں یہاں
کیا لینے آئی ہے تو رئیسوں کے شہر میں

زندوں کی بستیوں میں نہ مجھ کو ہوا نصیب
حاصل ہوا سکون جو مُردوں کے شہر میں

انصاف ہوسکے گا غریبوں کے حق میں کیا
ساری عدالتیں ہیں امیروں کے شہر میں

حیوانیت تو آدمیوں کے نگر میں تھی
دیکھی درندگی نہ درندوں کے شہر میں

مشتاقؔ خون چوسنے والے ملے بہت
مجھ کو سفید پوش شریفوں کے شہر میں
*******************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 272