rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Mushtaque Darbhangwi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* ہزاروں بار گرچہ لے چکا ہے امتحاں م *
ہزاروں بار گرچہ لے چکا ہے امتحاں مجھ سے
مگر وہ فتنہ پرور آج بھی ہے بدگماں مجھ سے

اٹھایا رنج و غم کا بوجھ میں نے عمر بھر ہنس کر
مگر اٹھا نہ اُن کے ناز کا بارِ گراں مجھ سے

مری رودادِ غم سن کر جگر ہوجائے گا چھلنی
نہ پوچھو اے چمن والوں قفس کی داستاں مجھ سے

ستم گر مجھ سے قرطاس و قلم تو چھین سکتا ہے
نہ ہرگز چھین پائے گا کبھی میری زباں مجھ سے

بلالی طرز میں میری صدا گونجے زمانے میں
تقاضہ کررہی ہے آج آوازِ اذاں مجھ سے

سہارا کون دے گا دشتِ غربت میں مجھے یارو
زمیں ناراض ہے مجھ سے خفا ہے آسماں مجھ سے

نہ تھا اِس کا گماں اے ہم صفیروں راہِ منزل میں
پتہ منزل کا پوچھے گا امیرِ کارواں مجھ سے

مرے سر پر ہے سایہ آج بھی اُس کی دعائوں کا
قضا نے چھین لی ہے گرچہ میری پیاری ماں مجھ سے

ہزاروں انقلاب آئے ہزاروں حادثے گزرے
مگر چھوٹا نہیں مشتاقؔ اُن کا آستاں مجھ سے
***************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 257