donateplease
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Mushtaque Darbhangwi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* شبِ فراق میں جو دل کو بے قرار کرے *
شبِ فراق میں جو دل کو بے قرار کرے
میں کیا کروں دلِ ناداں اُسی سے پیار کرے

اُسے کہو کہ محبت سے مجھ پر وار کرے
ستم گروں کا طریقہ نہ اختیار کرے

جو بے نقاب تجھے دیکھ لے کوئی اک بار
وہ تیرے حسن پہ کیونکر نہ جاں نثار کرے

اگر یقین کرے کوئی اُس کے وعدے پر
تمام عمر قیامت کا انتظار کرے

وہ کام تیغ و سناں سے بھی ہو نہیں سکتا
کہ ایک پل میں جو تیرِ نگاہِ یار کرے

خطا خطا ہے اُسے تو خطا کہیں گے ہم
وہ ایک بار کرے چاہے بار بار کرے

چمک ہے برقِ تپاں کی نگاہ میں اُس کی
مجال کس کی ہے جو اُس سے آنکھیں چار کرے

میں جان و دل سے اُسے چاہتا ہوں اے مشتاقؔ
وہ اعتبار کرے یا نہ اعتبار کرے
****************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 277