donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Shahid Jameel
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* ہر چہرہ سلگتے ہوئے قطروں میں بٹا ہ *
غزل

ہر چہرہ سلگتے ہوئے قطروں میں بٹا ہے
ہم سب کو سمندر سا کوئی ٹوٹ رہا ہے
وہ بجھتے چراغوں کا عَلَم لے کے چلا تھا
سنتے ہیں اُجالوں نے اُسے لوٹ لیا ہے
ناحق اُسے بے جان دعائوں میں ٹٹولا
کیا مجھ کو خبر میری ہتھیلی میں چھپا ہے
اب تم کو یہاں کوئی بھی آواز نہ دے گا
ہر شخص تمہاری ہی طرح ٹوٹ چکا ہے
تم ویسے بھی ٹوٹے سے رہا کرتے ہو شاید
باہر نہ ابھی نکلو، بہت تیز ہوا ہے
٭٭٭

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 383