donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khurshid Talab
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* بس ایک سانس لیا کھل کے لخت لخت ہوا *
غزل
٭………خورشید طلب

بس ایک سانس لیا کھل کے لخت لخت ہوا 
کہ زندگی نہ ہوئی کانچ کا درخت ہوا
بہت ذہین بھی ہونا وبالِ جاں ہے یہاں
ہمارے ساتھ ہر اک امتحان سخت ہوا
جہاں پہ مجھ کو حلیمی سے کام لینا تھا
اسی مقام پہ لہجہ مرا کرخت ہوا
نہ میں کسی کے لئے زاد وصل بن پایا
نہ ہجرتوں میں مرا کوئی ساز رخت ہوا
طلبؔ ہوائوں کے سینے پہ سانپ لوٹ گیا
پھر ایک ننھا سا پودا گھنا درخت ہوا
٭٭٭٭
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 323