donateplease
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Mushtaque Darbhangwi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* وہ درد بن کے آج بھی میرے جگر میں ہے *
وہ درد بن کے آج بھی میرے جگر میں ہے
ہر لمحہ اُس کی صورتِ زیبا نظر میں ہے

حاصل ہے چین شہر کے پختہ مکاں میں کب
قلبی سکوں تو گائوں کے مٹی کے گھر میں ہے

ممکن نہیں کہ راہِ وفا سے بھٹک سکوں
اک نور تیری یاد کا راہِ سفر میں ہے

بچھڑے ہوئے تو اُس سے زمانہ ہوا مگر
اُس کا اداس چہرہ ابھی تک نظر میں ہے

گزرا ہے اِس طرف سے کوئی گلبدن ضرور
خوشبو تمام پھیلی ہوئی رہ گزر میں ہے

تیری نظر سے کتنے نظارے ہوئے جواں
کیا بات اے صنم ترے حسنِ نظر میں ہے

مشتاقؔ ایسے دور میں ہم جی رہے ہیں آج
انسانیت گھری ہوئی خوف و خطر میں ہے
****************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 255