donateplease
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Mushtaque Darbhangwi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* رخسار و زلف و چشمِ بتاں کچھ نہ پوچھ *
رخسار و زلف و چشمِ بتاں کچھ نہ پوچھئے
الجھا ہے میرا ذہن کہاں کچھ نہ پوچھئے

کیسے جلا ہے خرمنِ جاں کچھ نہ پوچھئے
اُن کی نگاہِ شعلہ فشاں کچھ نہ پوچھئے

آئیں گے جب وہ بام پہ ناز و ادا کے ساتھ
اُس وقت کا حسین سماں کچھ نہ پوچھئے

ملتے ہیں سنگِ میل کی صورت کہاں نہیں
اُس پائے نازنیں کے نشاں کچھ نہ پوچھئے

یوں اُن کی چشمِ ناز کا مجھ پر ہوا اثر
ہر آرزو ہے دل کی جواں کچھ نہ پوچھئے

مثلِ شکستہ آئینہ ٹوٹے پڑے ہیں لوگ
انجامِ کاروبارِ جہاں کچھ نہ پوچھئے

مشتاقؔ رازدارِ محبت ہے میرا دل
کیا کچھ ہے میرے دل میں نہاں کچھ نہ پوچھئے
***************
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 287