donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Shahid Jameel
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* لہو کا زندہ کھنڈر دل ، دلوں کا غم آس *

غزل

لہو کا زندہ کھنڈر دل ، دلوں کا غم آسیب
زباں ہو لاکھ سنہری مگر قلم آسیب
تری نمود چراغاں، دھواں دھواں مری آنکھ
تو ہر یقیں میں مجسم، مرا بھرم آسیب
اُفق اُفق یہ تبسم ترا:نگاہ مری
ہوا کے رخ پہ مگر میری چشمِ نم آسیب
تو جاکے چھپ گیا یوں بادلوں کے پارکہیں
کہ ہر اصول کھنڈر اورہر قسم آسیب
یہ سیلِ غم کہ سرابِ خود آگہی کیا ہے
غبار شیشۂ دل، دل کا ہر صنم آسیب

+++

 
Comments


Login

You are Visitor Number : 398