donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Shahid Jameel
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* زمیں غبار ہوئی ہے کہ آسمانی تو *
غزل

زمیں غبار ہوئی ہے کہ آسمانی تو
میں بے ثبات حقیقت، امر کہانی تو
تری نمود کجا اور کجا وجود مرا 
میں گرد گرد لہو صاف صاف پانی تو
بصارتوں میں اُتریا بصیرتوں سے نواز
کہ میں نگاہِ دو چند اور بے کرانی تو
ترا وجود بہاراں مگر نصیب اس کا
قلم بدستِ خزاں، لوح امتحانی تو،
کوئی بھی شمع جلے، تو دھواں دھواں موجود
میں ایک حرفِ گماں اور یقین دہانی تو
+++
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 357