donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Shahid Jameel
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* مری نظر کہ ترادل ، پرنداوجھل ہے *
غزل

مری نظر کہ ترادل ، پرنداوجھل ہے
ہر ایک خواب کاحاصل، پرند اوجھل ہے
شجر جو کہہ نہ سکے، آسماں وہی سن لے
یقیں ہے وہم کی منزل، پرنداوجھل ہے
شفق شفق وہی سرخی :اڑان کی تعبیر
اُفق اُفق وہی محفل، پرند اوجھل ہے
صدا میں سمت نہیں بازگشت لامحدود
سفر کی شرط میں شامل پر نداوجھل ہے
بھنور کاکام جزیرے کو ورغلانا تھا
دھواں دھواں لب ساحل، پرنداوجھل ہے
+++
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 381