donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Shahid Jameel
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* یہ کیسا رشتہ چراغوں کا تیرگی سے تھ *
غزل

یہ کیسا رشتہ چراغوں کا تیرگی سے تھا
کہ ہر سراغ ترا گمرہی سے تھا
یہ سارے شہر میں کیسا غبار پھیلا ہے
میں ٹوٹ ٹوٹ کے بکھرا تو خاموشی سے تھا
وہ ایک لمحہ جو تحفے میں لائے تھے کل لوگ
وہ ایک لمحہ بھی میری ہی زندگی سے تھا
وہ خوش نصیب تھے، اک دوسرے کے دشمن تھے
مرا مقابلہ ہر موڑ پر مجھی سے تھا
تمہاری دی ہوئی اکتاہٹوں کا کیا کہنا!
میں رات کھُل کے بغل گیر زندگی سے تھا
مری اَنا سے جو شاہد اُبھرنے والا تھا
ڈرا ڈرا سا میں کتنا اُّ آدمی سے تھا
٭٭٭
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 378