donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Shahid Jameel
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* ایک دریا رواں نہیں ملتا *
غزل

ایک دریا رواں نہیں ملتا
ورنہ ساحل کہاں نہیں ملتا
صحن ہے یا فقط دریچہ ہے
اب مکمل مکاں نہیں ملتا
بارشیں کتنی تیز لگتی ہیں
جب کہیں سائباں نہیں ملتا
روشنی بے سحر بھی ہوتی ہے
ہر شرر کو دھواں نہیں ملتا
صرف غم کی زمین ہوتی ہے
ہجر میں آسماں نہیں ملتا
اے خدا تجھ سے ہٹ کے کیا سوچوں
در کوئی درمیاں نہیں ملتا
٭٭٭
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 383