donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Shahid Jameel
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* سحر تک نہ آکر کھلا ،کون ہے *
غزل

سحر تک نہ آکر کھلا ،کون ہے
مری نیند میں جاگتا کون ہے
مرا عکس پتھر پہ اترا ہوا
مرے واسطے آئینہ کون ہے
سفر کس کا تھا، پائوں کس کے تھکے
پلٹ کر یہ اب دیکھتا کون ہے
مجھے حسرتوں کا کوئی غم نہیں
دِلوں کو یہاں دیکھتا کون ہے
میں اپنے لئے کتنا انجان ہوں
مجھے اس طرح جانتا کون ہے
میں جس کے لئے تھا وہ میرا نہ تھا
جو میرے لئے ہے، مراکون ہے
٭٭٭
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 377