donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Shahid Jameel
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* تمام عمریوںکیاکہ خواب میںمگن رہے *
غزل

تمام عمریوںکیاکہ خواب میںمگن رہے
سمندروںکاغرم تھا، سراب میںمگن رہے
حقیقتوںکے شہرکی حکایتیں کچھ اور تھیں
کمال تھا کہ ہم فقط کتاب میں مگن رہے
دھواں اٹھاکیا مچل مچل کے صحن وبام سے
چراغ تھے کہ شام کے شباب میں مگن رہے
خوشی کے نام پر تمام عمریوں گزرگئی
نئے نئے غموں کے انتخاب میں مگن رہے
ہمیں تواے جمیلؔ اپنی ذات ہی نگل گئی 
وہ اورتھے جوساقی وشراب میں مگن رہے
٭٭٭
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 380