donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Shahid Jameel
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* مجھ میں جو عظیم تر نشہ تھا *
غزل

مجھ میں جو عظیم تر نشہ تھا
میرے ہی لہو کا ذائقہ تھا
پڑھ ڈالے تھے کچھ وفا کے قصے
صحرا میں سحاب ڈھونڈتا تھا
منزل پسِ نقش پا تھی کوئی
پیغام غبار پہ لکھا تھا
اب تک وہ حروف جل رہے ہیں
آنکھوں کو چراغ لکھ دیا تھا
آنکھوں کے چراغ گل نہ ہوتے
گل لب پہ مگر جو کھل گیا تھا
٭٭٭
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 419