donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Husainul Haque
Writer
--: Biography of Husainul Haque :--

Husainul Haque                 حسین الحق

 

 

نام : حسین الحق 
والد کا نام: مولانا حافظ محمد انوارالحق شہودی نازش سہسرامی
تاریخ ولادت: ۲؍نومبر ۱۹۴۹ء
مستقل پتہ: امڈاری ہائوس ، شاہ ہارون سہسرام ۔
تعلیم: مولوی، ایم اے ، ڈبل ، پی ایچ ڈی ۔
ملازمت: ریڈر شعبہ اردو ، مگدھ یونیورسٹی ، بودھ گیا ۔
اعزازات وانعامات: افسانوی مجموعہ ،صورت حال کو بہار اردواکادمی کادوسراسب سے بڑا انعام۔
پہلا افسانہ: پسند، ماہنامہ، جمیلہ ، دہلی ۱۹۶۵،
افسانوں کی تعداد: ہند وپاک کے مختلف رسائل میں تقریبا ایک سوپچاس کہانیاں چھپ چکی ہیں۔
افسانوی مجموعے: تین،۱۔ پس پردہ شب ، ۱۹۸۲ء،۲۔صورت حال ،۱۹۸۲ء،۳۔بارش میں گھرامکاں اپنا ،۱۹۸۵ء۔
دیگر تصانیف: اردو افسانوں میں علامت نگاری پی ایچ ڈی کا مقالہ زیر طبع، بولومت چپ رہو ناول ، ۵۰تنقیدی، ۲۵تاثراتی اور اتحقیقی مضامین چھپ چپکے ہیں۔ 
حسین الحق صاحب افسانہ نگاری کے تیسرے دور سے لکھ رہے ہیں یہ وہ دور تھا جب افسانے میں نئے نئے تجر بے ہورہے تھے۔ علامت نگاری کا بول بالا تھا شعور کی رو پر کہانیاں لکھنا ایک فیشن بن چکا تھا یہی وجہ ہے کہ انہوں نے بھی اس رجحان اور اس رویے کو اپنا یا لیکن اس نئے ڈھنگ سے اپنا یا کہ دیکھتے ہی دیکھتے جدید افسانوں کی دنیا میں ان کا نام اہمیت کا حامل بن گیا وہ اردو افسانوں میں اظہار کی تیز ترین دھار، نئے نئے الفاظ کے انتخاب اور جملوں کی تخلیقی سطح کی وجہ سے اپنے ہم عصروں سے کافی آگے بڑھ گئے ہیں۔ وہ کسی مسئلہ کو سننے سے زیادہ محسوس کرتے ہیں اور بے باک ہو کر گفتگو کرتے ہیں، یہی ایک ایسی طاقت ہے جس کے ذریعہ وہ پوری کائنات کو سانسوں میں اتار لینا چاہتے ہیں۔
ان کے ابتدائی افسانوں میں روایت سے بغاوت، عصری تنائو علامتوں کے تانے بانے اور جدیدیت کارنگ اسی طرح غالب نظر آتا ہے کہ اسے اچھی طرح سمجھنا عام قاری کے بس کی بات نہیں ہے۔
فاصلہ !انگوٹھے اور شہادت کی انگلی کا 
فاصلہ !انگوٹھے اور بچ والی انگلی کا
فاصلہ !انگوٹھے اور بیچ والی انگلی کے بغل والی انگلی
فاصلہ !گوٹھے اور چھنگلیاں کا 
میں ماررہا ہوں وہ جھک رہا ہے!
میں ماررہا ہوں وہ جھک رہا ہے !
میں ماررہا ہوں وہ جھک رہا ہے۔
اندھے دشائو ں کے سائے،
حسین الحق کافنی علامت ، استعارہ اور تمثیل کے بوتے پر مہیلیت سے کنارہ کشی اور ماورائی کائنات اور اقدار کی کہانی عبارت ہے خارجی حالات کی نامساعد کیفیات کا لامتناہی سلسلہ ایک طرف اور ہزاروں خواہشات کی تکمیلیت دوسری طرف ایسی صورت میں انسانی زندگی میں نضاد کا پیدا ہوجانا کوئی تعجب کی بات نہیں۔
حسین الحق صاحب نے ماضی کے حالات کو علامتوں کے پر پیچ تنوع کے ساتھ پیش کیا ہے خصوصیت سے تقسیم ہند کے بعد ہونے والے ہولناک واقعات ، فرقہ وارانہ فسادات کے اثرات ، سماج میں پھیلی ہوئی بدعنوانی اور گندگی ، تہذیبی زوال اور جنوب مشرقی ایشیا کے سیاسی پس منظر کو پر اثر انداز سے پیش کیا گیا ہے کہیں کہیں فضا آفرینی اور تجریدیت کی بوقلمونی ان کے افسانوں میں موجود ۔ 
جون کی جلتی پتتی اور سلگتی ہوئی دوپہر میں قطرہ قطرہ شبنم ٹپک رہی ہے اور میں انجانے میں کلیموں کے اس وسیع وعریض صحرا کا راہی بن گیا ہوں، حیرانی وپریشانی اس لق ودق سنسان بیابان میں یک وتنہا کھڑا سوچ رہا ہوں، ’’امرلتا‘‘
قمرالتوحیدصاحب کی طرح حسین الحق صاحب نے بھی آدمی پر ہونے والے مظالم کو دکھانے کی کوشش کی ہے ان ہی کے لفظوں میں۔
آدمی پر ہونے والے مظالم ،کمزور اقوام کے خلاف ظالم وجابرانسانی گرو ہوں کی سازستیں ، منفی اقدار کا پھیلائو ،وحدت آدم، وحدت کائنات ، سماج میں پھیلی گندگی، تقسیم ہند کے ہولناک اثرات فرقہ وارانہ فسادات کے پس منظر میں انسانی درزندگی کی روداد اقتدار کے ذریعہ ہماری طاقت ، احتجاج ملوکیت کی حمایت کے بد ترین نتائج ، وحدت وجود کی تہذیبی اہمیت، کھوئے ہوئوں کی جستجو، ۱۹۴۷ کے بعد جھوجھنے کا جذبہ رکھنے والی ہندوستانی مسلم قوم کی جدوجہد انسانی درد کی یکسانیت وغیرہ کو اپنے افسانوں میں پیش کیا ہے۔ دور حاضر کےمتعلق ان کا خیال ہے۔ ۷۰؁سے ۸۸؁ ۸۱ سال کے اس وقفے میں اردو افسانے نے یہ ثابت کردیا کہ نہ تو وہ یک رجائی یعنی ترقی پسند، ہے اور نہ ہی مطلق قنوطی یعنی غیر ترقی پسند بلکہ گزشتہ دودہائیوں میں سامنے آنے والے اردو افسانے معاصر زندگی کی حقیقی اور فنکارانہ پیش کش کی ہے نتیجتاً حقیقت نگاری سے زیادہ تنقیدی حقیقت نگاری کے آثار نمایاں ہیں۔ دوسری بات یہ ہے کہ ترقی پسندوں کے سپاٹ بیانیہ اور جدیدیوں کے مبہم علامتی انداز دونوں سے نئے افسانہ نے امن چھرالیا، لہذا آج کا معاصرہ اور افسانہ سپاٹ بھی نہیں ہے اور مبہم بھی نہیں ہے۔ مندرجہ بالا اقتباس سے حسین الحق صاحب کی افسانہ نگاری کو آسانی سے سمجھا جا سکتا ہے۔ نویں دہائی میں انہوں نے کچھ ایسی کہانیاں لکھی ہیں جنہیں اردو افسانہ نگاری کی تاریخ میں نمایاں مقام ملے گا۔ ان کی ابتدائی کہانیوں میں پس پردہ شب، صحرا کا سورج ، وقینا عذاب النار، اور، امرلتا، وغیرہ اچھی کہانیاں ہیں امید ہے وہ مستقبل میں اردو افسانے کو اچھی کہانیاں دیں گے۔
 
’’بشکریہ بہار میں اردو افسانہ نگاری ابتدا تاحال مضمون نگار ڈاکٹر قیام نیردربھنگہ‘‘’’مطبع دوئم ۱۹۹۶ء‘‘

Hussain Ul Haque (born 1949) is an eminent Urdu critic, Writer and theorist with a sufi approach in his thought and writings. He has nurtured a whole generation of Urdu researchers, writers and learners since the 1970s.

He is an Urdu erudite in the field of teaching and education since last 32 years. Started his teaching career in 1976 in Magadh University-Bodh Gaya- Gaya, India. Currently holds the chair for Dept. of Urdu and serving as Proctor in the same institution.

He has the Research Guidance Experience of 16 Ph.D degrees being already awarded and 4 research work in progress state in the various fields of Urdu literature and education.

Mr. Hussain Ul Haque has also held the following posts in the field of Academia.

    Prof. in Charge (Persian ) from Dec-1990 to Jan-1995 (Magadh University, Bodh Gaya)

    Superintendent of Examination
    Member of Selection Committee and Screening Board of Patna University, University of Calcutta, Aligarh Muslim University etc.
Story writer

More than 200 stories published in standard literary magazines of Urdu world. Dozens of them are translated in Hindi, English and Punjabi. He is regarded as an established name of Urdu Short Stories

Novelist

Two Novels are published (1. Bolo Mat Chup Raho 2. Furat). Well appreciated and discussed in literary circles of the country. FURAT is included in the syllabus of several universities of the country as well.

Research Scholar, Critic and Essayist More than 30 research papers presented and published, hundreds of critical articles and over 50 essays are being published and discussed in the various circles of education and literature. His non fictional works have been presented and rewarded in various highly reputed Urdu forums and journals.

Various other literary initiatives

    Founder member of Alhamra ( Drama ) society, Sasaram during student life (Bihar)

    Founder president of Quazi Ali Haque Academy, Sasaram (Bihar)
    Patron of Bazm-E-Nazish Gaya (Bihar)
    Director of Maulana Anwar Ul Haque Liberary-Gaya (Bihar)
    Participant in different types of Inter faith forums and dialigue.

Stories selected in Anthologies

No.     Anthology                           Story     Editor     Publication

1     Bees Nai Kahanian     Aatma Katha     Dr. A.A Fatmi     Allahabad
2     Bihar Mein Urdu Afsana     Lakht Lakht     Dr. W Asharafi     Patna
3     Sotoor     Aatma Katha     Kumar Pashi     Delhi
4     Urdu Ki Behtarin Kahanian     Sahra Mein Raqus     A. Amrohi     Delhi
5     Mear     Wa Qena Azabannar     Shahid Mahuli     Delhi
6     Irtequa     Hanoz     Kalam Haideri     Gaya
7     Urdu Ke Nomainda Afsane     Murda Radar     Urdu Academy     Delhi
8     Aaj Kal ke Afsane     Jab Ismail Jaga     Aaj Kal     Delhi
9     Fasadat Ke Afsane     Neo Ki Eint     Zobair Rizvi     Delhi
10     Asr Urdu Kahania     Fitrat ki Dagar     Penguin Publication     Delhi
11     Kahani ke Roop     Khoi Hawaon Ki Chaap     Dr.W. Asharafi     Ranchi
12     Collection of Urdu Stories     Khar Pusht     Prof. M.A Harjanvi     Bhagalpur


Books published


1. Aakhri Geet (Poetry-1977)
2. Pase Parda - E - Shab (Short Story-1981)
3. Soorat-E-Haal (1982)
4. Barish Mein Ghera Makhan (1986)
5. Ghane Jungalon Mein (1989)
6. Matla (1995)
7. Sooi ki Nok Par Ruka Lamha (1997)
8. Bolo Mat Chup Raho (Novel- 1990)
9. Furat (1992)
10. Asar-E-Hazrat Wasi (Biography-2001)
11. Asar-E- Baghawat (2008)
12. Newn Ki Eent (2009)
Editing and compiling


1. Harf-E- Tamanna (Nazish Sahsarami) Gazals-1984
2. Tasawwuf Wa Rahbaniat (Maulana Anwar Ul Haque) Mysticism-1999
3. Asar-E- Hazrat Waheed (Hazrat Waez Ul Haque) Biography- 2003
4. Gyasut- Talebeen (Maulana Gheysuddin) Mysticism-2005
5. Fauz-O-Falah Ki Gumshuda Kadi (Maulana Anwar Ul Haque) Mysticism-2007


Booklets


1. Classicy Ghazal Ka Imteyaz - Research Paper-2000
2. Esharia Sadat-E-Qutbi - Research-2003
3. Ittehad-E-Asateza Ki Ahmiat - Essay-1983
4. Tasawwuf Pasand Mosannefeen - Introduction - 1987
Honors and awards


1. National Merit Scholarship ( Govt. of Bihar) - 1970
2. Nomination as Delegate to Participate in XIII All India Persian Conference (Shanti Niketan-WB)-1991
3. Junior Fellowship (UGC- MHRD- India) - 1993-1995
4. Extension Lecturer -K.B.L Oriental Library (Patna-Bihar)-1995
5. Member of Advisory Panel for Saraswati Samman ( K.K Birla Delhi) - 1995
6. RajBhasha Award for Fiction and Poetry by Raj Bhasha Vibhag (Bihar) - 1998
7. Senior Fellowship ( Dept. of Culture MHRD-India) 1997-1999
8. Isbat-O-Nafi Award for Furat (Kolkata-WB)- 2001
9. Advisory Panel Member for Bihar Urdu Academy ( Urdu Academy- Bihar) - Since 2002
10. Akhtar Orainwai Award for fiction writing (Urdu Academy- Bihar) -2003
11. Extension Lecture on Sohail Azimabadi ( Urdu Academy- Bihar)- 2006
12. Extension Lecture on Importance of Literature ( Vir Kuwanr Singh Univ.- Bihar) - 2007
13. American Urdu Society Award for distinguished contribution in Urdu Literature - 2011

Apart for the above noted contributions of Mr Hussain Ul Haque, there are so many other literary and cultural activities with which he has kept associated himself as an active participant from local to the national levels. Society of Urdu Literature (SOUL-USA) and Halqa-e-Arbab-eZauq(USA) are few of American Urdu literary organizations with which he is actively associated as well.
Personal life

Born to a very simple and financially week family, Mr Hussain Ul Haque and his younger brother Dr. Ain Tabish are the only two kids survived out of 10 children to their parents. Childhood of both these siblings passed in the small town of Sasaram ( The place of Sher Shah Suri) Bihar.

Father Mr. Anwar Ul Haque was a noted nationalist and scholar of his time.Their Mother Mrs Shauqat Ara was also from Sasaram. Under their esteemed guidance and parenting, these two sons have inherited the whole Chishti and Quadri sufi approach in their life. And could succeed outstandingly in their mission of spreading the message of Sufi Islam.

Brother Dr. Ain Tabish is a noted Urdu Poet and an English connoisseur with a deepest possible understanding of literature and religion.

Wife of Mr Hussain Ul Haque is Mrs Nishat Israar (Daughter to Late Mr Israar Ul Haque (Asst. Registrar- MU- BodhGaya).

Mr. and Mrs Hussian Ul Haque have two daughters and two sons.


************************

 
You are Visitor Number : 2265