donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Kaif Azimabadi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* تنہائی میں خیال کا محور تراش لے *
غزل
کیف عظیم آبادی

تنہائی میں خیال کا محور تراش لے
سوکھے ہوئے لبوں میں سمندر تراش لے
تجھ کو جلا نہ دے کہیں صدیوں کی تشنگی
صحرا میں تو سراب کا منظر تراش لے
اس شہر بے اماں میں تو ممکن نہیں سکوں
پتھر کے سلسلوں میں کوئی گھر تلاش لے
تجھ کو ملے گی راہ میں تنہائیوں کی گرد
خوشبو کا جسم چاند سا پیکر تراش لے
آسان نہیں ہے کیفؔ یہ شیشہ گری کا فن
تو کوہ کن نہیں ہے جو پتھر تراش لے
٭٭٭
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 336