donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Kaif Azimabadi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* کھلی جو آنکھ میری تو فصیل درد میں ت&# *
غزل
کیف عظیم آبادی

 کھلی جو آنکھ میری تو فصیل درد میں تھا
 نشاط خواب کا لمحہ تھکن کی گرد میں تھا
 فراز دار سے گذرا پیمبروں کی طرح وہ
 ایک شخص جو اب تک حصولِ درد میں تھے
 اڑا کے لے گیا وہ بن کے موسموں کا عتاب
 وہ ایک خوف جو پوشیدہ برگ زرد میں تھا
٭٭٭
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 334