donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Kaif Azimabadi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* کھلی فضا میں ذرا جان و تن سے لے چلئے *
غزل
کیف عظیم آبادی

 کھلی فضا میں ذرا جان و تن سے لے چلئے
 مجھے نکال کے سانوں کے بن سے لے چلئے
 اندھیری رات میں مشعل بنے گا جس کا خیال
 وہ شئے لطیف سی غنچہ دہن سے لے چلئے
 جگر میں زخم مسرت نظر میں اشک خلوص
 کوئی حسین سا تحفہ وطن سے لے چلئے
 نگاہ و دل میں رہے نو ر بن کے جن کا جمال
 انہیں چراکے بھری انجمن سے لے چلئے
 پھر آنچ آئے نہ تقدیس حسن یوسف پر
 بچا کے سازشِ گرگِ دہن سے چلئے
٭٭٭
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 364