donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Kaif Azimabadi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* چھپ کے تنہائیوں میں سوچا ہے *
غزل
کیف عظیم آبادی

چھپ کے تنہائیوں میں سوچا ہے
سسکیاں کون مجھ میں لیتا ہے
کوئی بھی جائے عافیت نہ ملی
ہر طرف آدمی کا صحرا ہے
ہو گیا دل لہو لہو شاید
آج یادوں کا رنگ گہرا ہے
تم کو کیسے پسند آئے گا
جسم سچائیوں کا نیلا ہے
آدمی کا وجود ایندھن ہے
اپنی دوزخ میں آپ جلتا ہے
چھا گئی دھند سی نگاہوں میں
صاحبو! کیا خلوص گہرا ہے
٭٭٭
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 351