donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Kamal Jafri
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* کچھ اپنے گلستاں سے کچھ اُن کے گلست *
غزل

کچھ اپنے گلستاں سے کچھ اُن کے گلستاں سے
ہم لے کے پھول آئے دیکھو کہاں کہاں سے
وہ دھول اڑا رہے تھے ہم پر جہاں جہاں سے
دامن بچاکے گزرے ہم بھی وہاں وہاں سے
شدت سے دھوپ کی جو خود ہی پگھل رہا ہو
مجھ کو بچائو ایسے کمزور سائباں سے
ہم آشیاں کریں گے تعمیر آسماں پر
ناگاہ اپنا رشتہ ٹوٹا اگر جہاں سے
اس کے گواہ خود ہیں خورشید و ماہ و انجم
گہرا بہت زمیں کا رشتہ ہے آسماں سے
گل ہو کہ خار دونوں سے دوستی نبھائیں
اتنی سی ہے گزارش اربابِ گلستاںسے
موسم بدل رہا ہے شاید کمال صاحب
ہیں شہر کے مناظر بالکل دھواں دھواں سے

کمال جعفری

R-282/3, Gali No-7, Zakir Nagar, Okhla
New Delhi-110025
Mob: 9818569466
بشکریہ ’’میر بھی ہم بھی‘‘	مرتب: مشتاق دربھنگوی
………………………
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 559