donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Kashif Indori
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* جھوٹی سچی آس پہ جینا، کب تک آخر کب ت&# *
جھوٹی سچی آس پہ جینا، کب تک آخر کب تک
مئے کی جگہ خونِ دل پینا، کب تک آخر کب تک

سوچا ہے اب پار اتریں گے یا ٹکرا کر ڈوب مریں گے
طوفانوں کی زد میں سفینہ، کب تک آخر کب تک

ایک مہینے کے وعدے پر سال گزارا پھر بھی نہ آئے
وعدے کا یہ ایک مہینہ، کب تک آخر کب تک

سامنے دنیا بھر کے غم ہیں اور ادھر اک تنہا ہم ہین
سینکڑوں پتھر ایک آئینہ، کب تک آخر کب تک
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 1115