donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khald Shareef
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* جب سے قلم کو نامئہ معنی بنا لیا *
جب سے قلم کو نامئہ معنی بنا لیا
ہم نے جگر کے خون کو پانی بنا لیا

یوں ہم نے شہر شہر تیری داستاں کہی
ہر سنگِ رہ کو دشمنِ جانی بنا لیا 

میں نے پرو دئے تیرے بالوں میں سرخ پھول
اور اپنے روز و شب کو کہانی بنا لِیا

کیا جانے کس خیال میں اُٹھی تھی وہ نظر
اور ہم نے اُس سے شہرِ معانی بنا لیا

سب محوِ خواب ہوں تو مہک اس کی جاگ اُٹھے
ہم نے غزل کو رات کی رانی بنا لیا

خالدؔ وہ سانحہ تو اُسے یاد بھی نہیں
جو ہم نے عمر بھر کی نشانی بنا لیا
۔
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 380