donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khald Shareef
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* وہ تو گیا، اب اپنی اَنا کو سمیٹ لے *
وہ تو گیا، اب اپنی اَنا کو سمیٹ لے 
اے غمگسار! دستِ دعا کو سمیٹ لے 

بالوں میں اپنے ڈال لے اب خاک کوئے یار
بانہوں میں اُس گلی کی ہَوا کو سمیٹ لے 

مٹّی کی اِک لکیر بھی کہہ دے گی داستاں
چلنے کا شوق ہے تو روا کو سمیٹ لے

ان آبلوں کی روشنی بھٹکے گی شہر میں
اے کوچہ گردا گردشِ پا کو سمیٹ لے

لفظوں کو ترک کر دے کہ اِن کو نہیں ثبات
آنکھوں میں آج اپنی وفا کو سمیٹ لے

بس ایک چُپ ہی تیرے لبوں پر سجی رہے
بس اپنے دل میں سیلِ بلا کو سمیٹ لے

چہرے پہ اہلِ شہر کی آنکھیں سجا کے چل
ورنہ ہجومِ سنگِ سزا کو سمیٹ لے

خالد۔ؔ کبھی تو تذکرۂ جاں سنا ہمیں
اپنی صدا میں خوفِ صدا کو سمیٹ لے
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 385