donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khalda Siddique
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* نہ کوئی مرتبہ اپنا نہ کوئی اپنی ہس *
غزل

نہ کوئی مرتبہ اپنا نہ کوئی اپنی ہستی ہے
مکمل شہرِ الفت میں یہ کیسی دل کی بستی ہے

یہ دعویٰ بھی غلط نکلا محبت میں پرستش کا
یہ شامِ غم عجب شے ہے مرے ارماں کو ڈستی ہے

تمہاری ایک رٹ ہے دید کی کیسے تڑپتے ہو
یہ بینائی تو خوابوں کے اجالوں کو ترستی ہے

سرِ محفل ہزاروں جام چھلکے پیشِ مینا بھی
رہے محروم اک ہم ہی یہ کیسے مے پرستی ہے

سلگتی رات کا ہے درد تاروں میں دہکتا ہے
اُدھر وہ چاند روتا ہے اِدھر شبنم برستی ہے

یقینا زندگی قدرت کا ہے انمول اک تحفہ
جو ہم نے آزمایا تو حقیقت میں وہ سستی ہے

بچائوں کس طرح اے خالدہ بازیچۂ الفت
ہوا ہے نذرِ آتش دل ، تمنا بھی جھلستی ہے

خالدہؔ صدیقی

76, Ashoka Vihar
Nagar Nigam Colony
(Bhopal)
Mob: 9424455367
9229964882
بہ شکریہ جانِ غزل مرتب مشتاق دربھنگوی
+++
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 523