donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khumar Barabankvi
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* اک پل میں اک صدی کا مزا ہم سے پوچھیے *
اک پل میں اک صدی کا مزا ہم سے پوچھیے 
دو دن کی زندگی کا مزا ہم سے پوچھیے 

بھولے ہیں رفتہ رفتہ انہیں مدّتوں میں ہم 
قسطوں میں خود کشی کا مزا ہم سے پوچھیے 

آغازِعاشقی کا مزا آپ جانیے 
انجامِ عاشقی کا مزا ہم سے پوچھیے 

وہ جان ہی گئے کہ ہمیں ان سے پیار ہے 
آنکھوں کی مخبری کا مزا ہم سے پوچھیے 

جلتے دلوں میں جلتے گھروں جیسی ضَو کہاں 
سرکار روشنی کا مزا ہم سے پوچھیے 

ہنسنے کا شوق ہم کو بھی تھا آپ کی طرح
ہنسیے مگر ہنسی کا مزا ہم سے پوچھیے

ہم توبہ کر کے مر گئے قبلِ اجل خمار 
توہینِ مے کشی کا مزا ہم سے پوچھیے
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 368