donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khwaja Hyder Ali Aatish
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* سن تو سہی جہاں میں ہے تیرا فسانہ کی *
غزل

٭………خواجہ حیدر علی آتش

سن تو سہی جہاں میں ہے تیرا فسانہ کیا
کہتی ہے تجھ کو خلقِ خدا غائبانہ کیا
زیرِ زمیں سے آتا جو گُل سوز ربکف 
قارروںنے راستہ میں لٹایا خزانہ کیا
اڑتا ہے شوقِ راحت منزل سے اسپِ عمر
مہمیز کس کو کہتے ہیں اور تازیانہ کیا
طبل و علم ہی پاس ہے اپنے نہ ملک و مال
ہم سے خلاف ہو کے کرے گا زمانہ کیا
آتی ہے کس طرح سے مری قبضِ روح کو
دیکھوں تو موت ڈھونڈ رہی ہے بہانہ کیا
صیّاد اسیرِ دام رگِ گل ہے عندلیب
دِکھلا رہا ہے چھپ کے اسے آب و دانہ کیا
یاں مدعی حسد سے نہ دے داد تو نہ دے
آتشؔ غزل یہ تونے کہی عاشقانہ کیا
*****
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 290