donateplease
newsletter
newsletter
rishta online logo
rosemine
Bazme Adab
Google   Site  
Bookmark and Share 
design_poetry
Share on Facebook
 
Khwaja Mir Dard
 
Share to Aalmi Urdu Ghar
* کبھی خوش بھی کیا ہے دل کسی رندِ شرا *
 خواجہ میر درد

کبھی خوش بھی کیا ہے دل کسی رندِ شرابی کا
بھڑا دے مُنہ سے مُنہ ساقی ہمارا اور گلابی کا

چھُپے ہرگز نہ مثلِ بو، وہ پردوں کے چھپائے سے
مزہ پڑتا ہے جس گل پیرہن کو بے حجابی کا

شرار و برق کی سی بھی نہیں یہاں فرصتِ ہستی
فلک نے ہم کو سونپا کام جو کچھ تھا شتابی کا

میں اپنا دردِ دل چاہا کہوں جس پاس عالم میں
بیاں کرنے لگا قصہ وہ اپنی ہی خرابی کا

زمانے کی نہ دیکھی جرعہ ریزی درد کچھ تونے
ملایا مثلِ مینا خاک میں خوں ہر شرابی کا‬
*****
 
Comments


Login

You are Visitor Number : 311